Tuesday, October 26, 2021
Home اردو دکنی اردو میں اسلامی علوم کا اہم ذخیرہ موجود

دکنی اردو میں اسلامی علوم کا اہم ذخیرہ موجود


حیدرآباد: ”دکنی زبان میں تعلیمی کاموں کا آغاز علاءالدین خلجی کی فتوحات سے بہت پہلے شروع ہوچکا تھا۔ متعدد صوفیا کرام نے دکن کو اپنا مرکز بنایا اور انسانیت کی خدمات انجام دیتے رہے، ان میں چند نام حاجی رومی، سید شاہ مومن، بابا سید مظہرعالم وغیرہ کے ملتے ہیں۔ ابتداء میں ان کے ذریعہ کیا جانے والا کام منظوم شکل میں تھا، پھر نثر میں کام ہونے لگا“۔ ان خیالات کا اظہار پر وفیسر محمد نسیم الدین فریس، ڈین اسکول برائے السنہ، لسانیات وہندوستانیات نے شعبہ اسلامک اسٹڈیز، مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی کی جانب سے 27 اگست کو منعقدہ اپنے آن لائن توسیعی خطبہ ”دکنی اردو میں علمی سرمایہ“ میں کیا۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Recent Comments

error: We are sorry, You can\'t Copy it.