Sunday, October 17, 2021
Home اردو یہ ایک ناقابل یقین اور مسابقتی میچ تھا: دہلی کیپیٹلس کو ہرانے...

یہ ایک ناقابل یقین اور مسابقتی میچ تھا: دہلی کیپیٹلس کو ہرانے کے بعد وراٹ کا بیان


ہمیں میدان میں زیادہ چست ہونے کی ضرورت ہے۔ بعض اوقات اہم لمحات میں چوکے اور چھکے لگانا اہم ہو سکتا ہے۔

فائل تصویر آئی اے این ایس
user

Engagement: 0

رائل چیلنجرز بنگلور کے کپتان وراٹ کوہلی نے جمعہ کو ایک سنسنی خیز آئی پی ایل میچ میں دہلی کیپیٹلز کے خلاف جیت کے بعد کہا کہ یہ ایک ناقابل یقین میچ تھا۔ ہمارے پاس کھونے کے لیے کچھ نہیں تھا لیکن یہ ایک مسابقتی میچ تھا جو ہمیشہ آئی پی ایل میں ہوتا ہے۔

وراٹ نے میچ کے بعد کہا کہ “وکٹیں گنوانے کے باوجود پوائنٹس ٹیبل میں سرفہرست ٹیم کو ہرانا اچھا لگتا ہے۔ ہم نے انہیں اب تک دو مرتبہ شکست دی ہے۔ اے بی نے شروع میں جس طرح بیٹنگ کی اور پھر جس طرح سریکر بھرت اور میکس ویل نے آخر میں بیٹنگ کی وہ ناقابل یقین تھا۔ حقیقت یہ تھی کہ ٹاپ ٹو میں شامل ہونے کے لیے ہمیں 160 رنز سے جیتنا تھا۔ ہم نے یہ سوچ کر کھیلا کہ وہاں کسی بھی صورت سے کھیل کو آگے بڑھاسکتے ہیں۔ ہم نے اس ٹورنامنٹ میں بڑے ہدف کا پیچھا نہیں کیا۔ نمبر تین پررہنا کوئی موضوع نہیں ہے۔

بنگلورو کے کپتان نےبتایاکہ “ہم کرشچن کو کچھ وقت دینا چاہتے تھے۔ وہ درمیان میں اچھی بیٹنگ کر رہے تھے۔ ہم نے یہ موقع حاصل کیا لیکن وہ باہر نہیں آئے۔ ہم جانتے تھے کہ بھرت ایک کھلاڑی تھا جو کسی بھی وقت تیسرے نمبر پر آ سکتا تھا۔ میرے خیال میں ہمیں میدان میں زیادہ چست ہونے کی ضرورت ہے۔ بعض اوقات اہم لمحات میں چوکے اور چھکے لگانا اہم ہو سکتا ہے۔ آپ کو ہمیشہ محتاط رہنے کی ضرورت ہے۔ اس قسم کی فتح آپ کو اعتماد میں اضافہ کرتی ہے۔ ہم نے شارجہ میں اچھا کھیلا ہے۔ اگر چیزیں ہم سے دور ہو جاتی ہیں تو ہم حالات کو سنبھالنے اور اپوزیشن کو کنٹرول میں رکھنے کے قابل ہیں۔ ہمارے پاس پہلے ہی تجربہ ہے اور ہمیں اس ٹورنامنٹ میں آگے بڑھنے کے لیے زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھانے کی ضرورت ہے۔ “

چنئی کی بات کریں تو اس کا ٹاپ آرڈر مضبوط ہے۔ خاص طور پر رتوراج گائیکواڈ ایک مختلف تال میں نظر آرہے ہیں اور تجربہ کار فاف ڈو پلیسیس ان کا ساتھ بخوبی دے رہے ہیں۔ دوسرے مرحلے کے تقریباً سبھی میچوں میں دونوں اوپنرز نے اچھی اور جارحانہ شروعات کی ہے۔ ڈو پلیسیس 14 میچوں میں 546 رنز کے ساتھ اس سیزن میں سب سے زیادہ رنز بنانے والوں کی فہرست میں دوسرے نمبر پر ہیں جبکہ رتوراج 14 میچوں میں 533 رنز کے ساتھ چوتھے نمبر پر ہیں۔ ڈوین براوو ، جوش ہیزل ووڈ ، شاردول ٹھاکر ، دیپک چاہر اور رویندرا جدیجا گیندبازی میں عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔ ڈو پلیسس نے پانچ نصف سنچریاں بنائی ہیں ، جبکہ رتوراج نے تین نصف سنچریاں اور ایک سنچری اسکور کی ہے۔
دونوں ٹیموں کے لیے کوالیفائر میچ میں جیت ان کے فائنل میں جگہ کو یقینی کرے گی حالانکہ شکست کے باوجود بھی انہیں فائنل میں پہنچنے کا ایک اور موقع ملے گا۔ ہارنے والی ٹیم پیر کو شارجہ میں رائل چیلنجرز بنگلور اور کولکتہ نائٹ رائیڈرز کے درمیان ایلیمینیٹر میچ کی فاتح کا سامنا کرے گی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔




Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Recent Comments

error: We are sorry, You can\'t Copy it.